Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Krishn Bihari Noor's Photo'

کرشن بہاری نور

1926 - 2003 | لکھنؤ, انڈیا

مقبول عام شاعر، لکھنوی زبان و تہذیب کے نمائندے

مقبول عام شاعر، لکھنوی زبان و تہذیب کے نمائندے

کرشن بہاری نور

غزل 30

اشعار 20

آئنہ یہ تو بتاتا ہے کہ میں کیا ہوں مگر

آئنہ اس پہ ہے خاموش کہ کیا ہے مجھ میں

  • شیئر کیجیے

اتنے حصوں میں بٹ گیا ہوں میں

میرے حصے میں کچھ بچا ہی نہیں

تشنگی کے بھی مقامات ہیں کیا کیا یعنی

کبھی دریا نہیں کافی کبھی قطرہ ہے بہت

چاہے سونے کے فریم میں جڑ دو

آئنہ جھوٹ بولتا ہی نہیں

میں جس کے ہاتھ میں اک پھول دے کے آیا تھا

اسی کے ہاتھ کا پتھر مری تلاش میں ہے

کتاب 6

 

ویڈیو 6

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
Nazar mila na sake us se us nigaah ke baad

کرشن بہاری نور

Reading his poetry at a mushaira

کرشن بہاری نور

Wo kya hai, kaun hai, kaise koi nazar jaane

کرشن بہاری نور

اک غزل اس پہ لکھوں دل کا تقاضا ہے بہت

کرشن بہاری نور

زندگی سے بڑی سزا ہی نہیں

کرشن بہاری نور

متعلقہ شعرا

"لکھنؤ" کے مزید شعرا

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے