Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ہم کو شب وصال بھی رنج و محن ہوا

نظام رامپوری

ہم کو شب وصال بھی رنج و محن ہوا

نظام رامپوری

MORE BYنظام رامپوری

    ہم کو شب وصال بھی رنج و محن ہوا

    قسمت خلاف طبع ہوا جو سخن ہوا

    پھر آنے کی ہوس میں سحر کس خوشی کے ساتھ

    ہم راہ نالہ درد جگر بھی معن ہوا

    گردش بھی اس کے کوچے میں ہے اور قرار بھی

    قسمت تو دیکھیے کہ سفر میں وطن ہوا

    قاتل ادائے شکر کو یا شکوؤں کے لیے

    جو زخم جسم پر ہوا گویا دہن ہوا

    ثابت قدم ہوا نہ رہ عشق میں کوئی

    مجنوں کوئی ہوا تو کوئی کوہ کن ہوا

    کچھ مجھ سے شب کو غیر کے اظہار کے لیے

    یہ عشق بازی کی تھی کہ اپنا یہ فن ہوا

    دشمن سے اور ہوتیں بہت باتیں پیار کی

    شکر خدا یہ ہے کہ وہ بت کم سخن ہوا

    لب پر ہنسی وہ آئی وہ چین جبیں گئی

    کہتا تو ہوں خطا ہوئی دیوانہ پن ہوا

    آئینہ دیکھ دیکھ کے کیا دیکھتے ہو تم

    چھونا بھی یاں نصیب تمہارا بدن ہوا

    اب بوسہ دینے میں تمہیں کس بات کا ہے عذر

    گالی کے دینے سے ہمیں ثابت دہن ہوا

    حق بات تو یہ ہے کہ اسی بت کے واسطے

    زاہد کوئی ہوا تو کوئی برہمن ہوا

    تقدیر کی یہ بات ہے اب کیا کرے کوئی

    راضی ہوئے وہ بوسے پہ تو گم دہن ہوا

    پھر میرے اضطراب میں کیوں شک ہے آپ کو

    الفت کا جب یقیں تمہیں اے جان من ہوا

    لب تک نہ آیا حرف تمنا کبھی نظامؔ

    گویا مرا سخن بھی تمہارا دہن ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat-e-nizaam (Pg. 69)
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے