Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

وہ سرد فاصلہ بس آج کٹنے والا تھا

کیفی وجدانی

وہ سرد فاصلہ بس آج کٹنے والا تھا

کیفی وجدانی

MORE BYکیفی وجدانی

    وہ سرد فاصلہ بس آج کٹنے والا تھا

    میں اک چراغ کی لو سے لپٹنے والا تھا

    بہت بکھیرا مجھے میرے مہربانوں نے

    مرا وجود ہی لیکن سمٹنے والا تھا

    بچا لیا تری خوشبو کے فرق نے ورنہ

    میں تیرے وہم میں تجھ سے لپٹنے والا تھا

    اسی کو چومتا رہتا تھا وہ کہ اس کو بھی

    عزیز تھا وہی بازو جو کٹنے والا تھا

    مجھی کو راہ بدلنی تھی سو بدل ڈالی

    کہیں پہاڑ بھی ٹھوکر سے ہٹنے والا تھا

    تلاش جس کی تھی وہ حرف مل گیا ورنہ

    میں ایک سادہ ورق اور الٹنے والا تھا

    یہ کس کو تیر چلانے کا شوق جاگ اٹھا

    وہ باز میری طرف ہی جھپٹنے والا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : ras-Rang(Mehfil-e-Adab) (Pg. 7)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے