aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

وہم و گماں میں بھی کہاں یہ انقلاب تھا

حیات لکھنوی

وہم و گماں میں بھی کہاں یہ انقلاب تھا

حیات لکھنوی

MORE BYحیات لکھنوی

    وہم و گماں میں بھی کہاں یہ انقلاب تھا

    جو کچھ بھی آج تک نظر آیا وہ خواب تھا

    پائے مراد پا کے وہ بے حال ہو گیا

    منزل بہت حسین تھی رستہ خراب تھا

    چہرے کو تیرے دیکھ کے خاموش ہو گیا

    ایسا نہیں سوال ترا لا جواب تھا

    اس کے پروں میں قوت پرواز تھی مگر

    ان موسموں کا اپنا بھی کوئی حساب تھا

    آنکھوں میں زندگی کی طرح آ بسا ہے وہ

    میری نظر میں پہلے جو منظر خراب تھا

    جیسے ہوا کا جھونکا تھا آ کر گزر گیا

    وہ شخص اس کے بعد کہاں دستیاب تھا

    سارا کلام اس سے معنون ہوا حیاتؔ

    جس کا وجود خود بھی مکمل کتاب تھا

    مأخذ:

    Rooh-e-Ghazal,Pachas Sala Intekhab (Pg. 380)

      • اشاعت: 1993
      • ناشر: انجمن روح ادب، الہ آباد
      • سن اشاعت: 1993

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے