aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پریم پجاری دل کو میرے تحفہ یہ انمول دیا

سلیم صدیقی

پریم پجاری دل کو میرے تحفہ یہ انمول دیا

سلیم صدیقی

MORE BYسلیم صدیقی

    پریم پجاری دل کو میرے تحفہ یہ انمول دیا

    اس نے چاہت کے پیالے میں وش نفرت کا گھول دیا

    کیسی قسمیں کیسے وعدے اور کیسا پیمان وفا

    پیار کو میرے دولت کی میزان پہ اس نے تول دیا

    کب تک تنہا تنہا جیتے کب تک دل کو سمجھاتے

    جسم سے اپنے باندھا تھا جو سانس کا بندھن کھول دیا

    اس سے اچھا تھا بک جاتے ہم بھی سستی قیمت میں

    ہم نے اپنا فن دنیا کو بے بھاؤ بے مول دیا

    آہیں آنسو یاس کسک بے تابئ دل اور محرومی

    میرے دلبر نے مجھ کو یہ میرے دل کا مول دیا

    گلیوں گلیوں شہروں شہروں کس نے آگ لگائی ہے

    بغض و نفرت کا دنیا کو کس نے یہ ماحول دیا

    دل میں اک ہلچل سی بپا ہے نس نس میں ہیجان سلیمؔ

    جانے کس نے کان میں آ کے خوشیوں کا رس گھول دیا

    مأخذ:

    قلندر بولتا ہے (Pg. 79)

    • مصنف: سلیم صدیقی
      • ناشر: ایمن پبلی کیشنز، دہلی
      • سن اشاعت: 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے