aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

میری نظر کے لیے کوئی روایت نہ تھی

انور صدیقی

میری نظر کے لیے کوئی روایت نہ تھی

انور صدیقی

MORE BYانور صدیقی

    میری نظر کے لیے کوئی روایت نہ تھی

    سب کی طرح دیکھنا جبر تھا عادت نہ تھی

    ایسا لگا جیسے میں منظر مانوس تھا

    اس کی نگاہوں میں کل شوخیٔ حیرت نہ تھی

    میرے شب و روز تھے میری صدی کی طرح

    کون سا لمحہ تھا وہ جس میں قیامت نہ تھی

    پیرہن جسم و جاں زخم ستم تھا تمام

    کیسا ستم گر تھا وہ کوئی جراحت نہ تھی

    کب کسی دیوار سے سیل تمنا رکا

    گرم لہو کی کبھی کوئی شریعت نہ تھی

    کتنے سبک دل ہوئے تجھ سے بچھڑنے کے بعد

    ان سے بھی ملنا پڑا جن سے محبت نہ تھی

    مأخذ:

    Aazadi ke baad dehli men urdu gazal (Pg. 65)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے