aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کچھ یہاں بے طلب نہیں ملتا

محمد اعظم

کچھ یہاں بے طلب نہیں ملتا

محمد اعظم

MORE BYمحمد اعظم

    کچھ یہاں بے طلب نہیں ملتا

    مجھ کو وہ کیا عجب نہیں ملتا

    کچھ چھلکتا ہے کچھ بکھرتا ہے

    سب ملے تو بھی سب نہیں ملتا

    حیف اب عشق کی دکانوں پر

    نالۂ نیم شب نہیں ملتا

    کب ہوئی شہر دل کی رکھوالی

    ایک گھر بے نقب نہیں ملتا

    دل سے خالی ہوئے ہیں جب سے پاؤں

    ڈھونڈنے سے بھی رب نہیں ملتا

    قہر یہ ہے کہ اب حسینوں میں

    پہلے جیسا غضب نہیں ملتا

    ہم نہیں مانتے کوئی ہونا

    جب تک اس کا سبب نہیں ملتا

    مدتوں چومتی ہیں بس آنکھیں

    ایک دم لب سے لب نہیں ملتا

    اس کو اتنا سنبھال کر رکھا

    کہ مجھے خود بھی اب نہیں ملتا

    بہر لذت ہے اس کا گم کرنا

    ڈھونڈتا ہوں وہ جب نہیں ملتا

    اب کہاں پائیں ناقہ و لیلیٰ

    بدوؤں کا عرب نہیں ملتا

    عہد و احساس کی فصیل ہے بیچ

    میر صاحب کا ڈھب نہیں ملتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے