aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اس گفتگو سے یوں تو کوئی مدعا نہیں

عزیز حامد مدنی

اس گفتگو سے یوں تو کوئی مدعا نہیں

عزیز حامد مدنی

MORE BYعزیز حامد مدنی

    اس گفتگو سے یوں تو کوئی مدعا نہیں

    دل کے سوا حریف کوئی دوسرا نہیں

    آنکھیں ترس گئیں تمہیں دیکھے ہوئے مگر

    گھر قابل ضیافت مہماں رہا نہیں

    ناقوس کوئی بحر کی تہہ میں ہے نعرہ زن

    ساحل کی یہ صدا تو کوئی ناخدا نہیں

    مانا کہ زندگی میں ہے ضد کا بھی ایک مقام

    تم آدمی ہو بات تو سن لو خدا نہیں

    لطف سخن یہی تھا کہ خود تم بھی کچھ کہو

    یہ وہم ہے کہ اب کوئی گوش وفا نہیں

    میری وفا برائے وفا اتفاق تھی

    میرے سوا کسی پہ یہ افسوں چلا نہیں

    اس کی نظر تغیر حالات پر گئی

    کوئی مزاج دان محبت ملا نہیں

    مأخذ:

    Kulliyat-e-Aziz Hamid Madni (Pg. 472)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے