aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

برگشتۂ یزدان سے کچھ بھول ہوئی ہے

ساغر صدیقی

برگشتۂ یزدان سے کچھ بھول ہوئی ہے

ساغر صدیقی

MORE BYساغر صدیقی

    برگشتۂ یزدان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    بھٹکے ہوئے انسان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    تا حد نظر شعلے ہی شعلے ہیں چمن میں

    پھولوں کے نگہبان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    جس عہد میں لٹ جائے فقیروں کی کمائی

    اس عہد کے سلطان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    ہنستے ہیں مری صورت مفتوں پہ شگوفے

    میرے دل نادان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    حوروں کی طلب اور مے و ساغر سے ہے نفرت

    زاہد ترے عرفان سے کچھ بھول ہوئی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے