Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آنکھوں میں اس کی میں نے آخر ملال دیکھا

محمد اعظم

آنکھوں میں اس کی میں نے آخر ملال دیکھا

محمد اعظم

MORE BYمحمد اعظم

    آنکھوں میں اس کی میں نے آخر ملال دیکھا

    کن کن بلندیوں پر اپنا زوال دیکھا

    ساز فلک نے چھیڑا معنی کا راگ جس دم

    فرش زمیں پہ رقصاں پائے خیال دیکھا

    وہ کودتے اچھلتے رنگین پیرہن تھے

    معصوم قہقہوں میں اڑتا گلال دیکھا

    یہ کون ہے جو مجھ میں مجھ سے الجھ رہا ہے

    سو بار میں نے خود کو خود سے نکال دیکھا

    کیا جانے کون ہیں وہ جن کے لئے جدا ہیں

    میں نے تو ایک صورت ہجر و وصال دیکھا

    کچھ زخم کاوشوں کے کچھ حسرتوں کے لاشے

    باہر سے کچھ زیادہ اندر قتال دیکھا

    ناکام حسرتوں کی روداد مختصر ہے

    بھائے وہ کام جی کو جن کو محال دیکھ

    اے دل خبیث اب تو کس کس پہ جان دے گا

    میں نے تو ہر قدم پر اک بے مثال دیکھا

    تاریخ ہے کہ خود کو دہرائے جا رہی ہے

    باسی کڑھی میں ہم نے یوں بھی ابال دیکھا

    دل سے اتر گئیں اب پاس وفا کی باتیں

    میں نے بھی ایک مدت تک یہ روگ پال دیکھا

    بس تھا کہ اس سے پوچھوں یہ خوش گمانیاں کیوں

    اتنے میں اس کے منہ پر اپنا سوال دیکھا

    کچھ صاف اس کا چہرہ مطلب نہیں بتاتا

    یوں تھا کہ جیسے میں نے قرآں میں فال دیکھا

    مجھ کو غرض نہیں کچھ کیسا ہے اور کیا ہے

    جو بھی خیال آیا شعروں میں ڈھال دیکھا

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے