Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ہولی کھیلنے کی فرمائش پر

کنولؔ ڈبائیوی

ہولی کھیلنے کی فرمائش پر

کنولؔ ڈبائیوی

MORE BYکنولؔ ڈبائیوی

    ہے یہ احباب کو اصرار کہ ہولی کھیلوں

    توڑ دوں آج تو میں زہد و تقدس کا فسوں

    مست ہو کر میں پیوں جام شراب ہستی

    ہمہ تن بادۂ عشرت کے نشے میں جھوموں

    اپنی سنجیدہ روش اور اداسی چھوڑوں

    غم کے اصنام کو بت خانۂ دل میں توڑوں

    جل اٹھیں غم کے شبستاں میں مسرت کے چراغ

    بربط دل کے ہر اک تار کو پھر سے جوڑوں

    مجھ کو بہلائیں گے کیا اہل طرب کے نغمے

    اور تیوہار کی رنگین خوشی کے لمحے

    میں نے ہر نقش مسرت کو دبا رکھا ہے

    اور دیکھے ہیں حسیں دور کے سندر سپنے

    سونی سونی نظر آتی ہے بساط ہستی

    نہ کہیں شیشہ و ساغر نہ سرور و مستی

    چشم مفلس میں لرزتے ہوئے اشکوں کے چراغ

    قلب نادار ہے جیسے کوئی اجڑی بستی

    آج انسان کا انسان لہو پیتا ہے

    آج تہذیب کا سلطان یوں ہی جیتا ہے

    دیوتا جبر پہ راون کے ہراساں جیسے

    دامن ارمان کو نادار یوں ہی سیتا ہے

    آج انسان ہوا مکر و دغا کا دفتر

    قلب زردار ہے احساس خودی کا خوگر

    بے خبر ہو کے غریبوں کی دبی آہوں سے

    آدمی کبر و رعونت کا بنا ہے پیکر

    ہولیاں کھیلتے ہیں خون بشر سے منعم

    اپنے اعمال پہ ہوتا نہیں انساں نادم

    آہ افلاس سے ٹھکرائی جوانی کا شباب

    فکر کی دھوپ سے لرزاں ہے مثال مجرم

    قلب محکوم ہے اس دور میں سنسان دیار

    ہو گیا ہے دل مجبور دکھوں سے بیزار

    کیا نہ آئے گا کبھی دہر میں پرہلاد کا دور

    آگ ہولی کی کسی روز بنے گی گلزار

    مطمئن آج نہ دنیا کا مکیں ہے کوئی

    دہر میں کبر سے خالی نہ جبیں ہے کوئی

    آج زردار بنا بیٹھا ہے ہرناکشیپ

    آہ اس دور میں دم ساز نہیں ہے کوئی

    ہر طرف کبر و رعونت کے سلگتے ہیں الاؤ

    ہر طرف زیست کے گلشن میں ہے شعلوں کا جماؤ

    آج پھر ہولکا پرہلاد کو لے بیٹھی ہے

    پھر سے اس جلتی ہوئی آگ کو گلزار بناؤ

    پھر بدلنے ہیں مجھے بیکس و مجبور کے بھاگ

    آج بھی ڈستے ہیں نادار کو زردار کے ناگ

    جذب احساس کے شعلوں کی تپش سے اک دن

    زر کی لنکا میں لگا دینا ہے اک بار پھر آگ

    مأخذ :
    • کتاب : Mizraab (Kulliyat) (Pg. 76)
    • Author : Kanwal Dibaivi
    • مطبع : Kitabi Duniya, Delhi (2010)
    • اشاعت : 2010

    موضوعات

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے