aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جب سے خط ہے سیاہ خال کی تھانگ

میر تقی میر

جب سے خط ہے سیاہ خال کی تھانگ

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    جب سے خط ہے سیاہ خال کی تھانگ

    تب سے لٹتی ہے ہند چاروں دانگ

    بات عمل کی چلی ہی جاتی ہے

    ہے مگر اوج بن عنق کی ٹانگ

    بن جو کچھ بن سکے جوانی میں

    رات تو تھوڑی ہے بہت ہے سانگ

    عشق کا شور کوئی چھپتا ہے

    نالۂ عندلیب ہے گلبانگ

    اس ذقن میں بھی سبزی ہے خط کی

    دیکھو جیدھر کنوئیں پڑی ہے بھانگ

    کس طرح ان سے کوئی گرم ملے

    سیم تن پگھلے جاتے ہیں جوں رانگ

    چلی جاتی ہے حسب قدر بلند

    دور تک اس پہاڑ کی ہے ڈانگ

    تفرہ باطل تھا طور پر اپنے

    ورنہ جاتے یہ دوڑ ہم بھی پھلانگ

    میں نے کیا اس غزل کو سہل کیا

    قافیے ہی تھے اس کے اوٹ پٹانگ

    میرؔ بندوں سے کام کب نکلا

    مانگنا ہے جو کچھ خدا سے مانگ

    مأخذ:

    MIRIYAAT - Diwan No- 1, Ghazal No- 0263

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے