aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جام تہی لہرایا ہم نے

عرفان صدیقی

جام تہی لہرایا ہم نے

عرفان صدیقی

MORE BYعرفان صدیقی

    جام تہی لہرایا ہم نے

    کیسا جشن منایا ہم نے

    رات ہوا کے ساتھ نکل کر

    حلقۂ در کھڑکایا ہم نے

    چپ گلیوں میں دیں آوازیں

    شہر میں شور مچایا ہم نے

    خاک تھے لیکن لہر میں آ کر

    رقص جنوں فرمایا ہم نے

    دیکھیں کب ہوں عشق میں کندن

    راکھ تو کر دی کایا ہم نے

    عمر شرر بے کار نہ گزری

    پل بھر تو چمکایا ہم نے

    سب کو نشانہ کرتے کرتے

    خود کو مار گرایا ہم نے

    تم سے ملے تو خود سے زیادہ

    تم کو اکیلا پایا ہم نے

    اپنے سر کی آن پہ واری

    پاؤں سے لپٹی مایا ہم نے

    اے شب ہجراں اب تو اجازت

    اتنا ساتھ نبھایا ہم نے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے