aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

اک تیری بے رخی سے زمانہ خفا ہوا

عرش صدیقی

اک تیری بے رخی سے زمانہ خفا ہوا

عرش صدیقی

MORE BYعرش صدیقی

    اک تیری بے رخی سے زمانہ خفا ہوا

    اے سنگ دل تجھے بھی خبر ہے کہ کیا ہوا

    دریوزہ گر سمجھ کے تو تھی ملتفت حیات

    وہ یوں کہو کہ دامن دل ہی نہ وا ہوا

    ڈوبا کچھ اس طرح سے مرا آفتاب دل

    سب کچھ ہوا یہ پھر نہ سحر آشنا ہوا

    یوں اس کے در پہ بیٹھے ہیں جیسے یہیں کے ہوں

    ہائے یہ درد عشق جو زنجیر پا ہوا

    چھینی ہے عشق نے تب و تاب‌ دماغ و دل

    میں کیسے شاہ زور سے زور آزما ہوا

    گھر سے چلو تو باندھ کے سر سے کفن چلو

    شہر وفا سے دشت فنا ہے ملا ہوا

    دل دے کے خوش ہوں میں کہ حفاظت کا غم گیا

    تجھ سے قریب ہے وہ جو مجھ سے جدا ہوا

    لب سے لگا تو بھول گئے ہم غم حیات

    ساغر میں کوئی تجھ سا حسیں ہے چھپا ہوا

    پی ہم نے خوب عرشؔ کشید نگاہ و دل

    کس میکدے کا در تھا جو ہم پر نہ وا ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے