Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

چپ ہے آغاز میں، پھر شور اجل پڑتا ہے

عرفان ستار

چپ ہے آغاز میں، پھر شور اجل پڑتا ہے

عرفان ستار

MORE BYعرفان ستار

    چپ ہے آغاز میں، پھر شور اجل پڑتا ہے

    اور کہیں بیچ میں امکان کا پل پڑتا ہے

    ایک وحشت ہے کہ ہوتی ہے اچانک طاری

    ایک غم ہے کہ یکایک ہی ابل پڑتا ہے

    یاد کا پھول مہکتے ہی نواح شب میں

    کوئی خوشبو سے ملاقات کو چل پڑتا ہے

    حجرۂ ذات میں سناٹا ہی ایسا ہے کہ دل

    دھیان میں گونجتی آہٹ پہ اچھل پڑتا ہے

    روک لیتا ہے ابد وقت کے اس پار کی راہ

    دوسری سمت سے جاؤں تو ازل پڑتا ہے

    ساعتوں کی یہی تکرار ہے جاری ہر دم

    میری دنیا میں کوئی آج، نہ کل پڑتا ہے

    تاب یک لحظہ کہاں حسن جنوں خیز کے پیش

    سانس لینے سے توجہ میں خلل پڑتا ہے

    مجھ میں پھیلی ہوئی تاریکی سے گھبرا کے کوئی

    روشنی دیکھ کے مجھ میں سے نکل پڑتا ہے

    جب بھی لگتا ہے سخن کی نہ کوئی لو ہے نہ رو

    دفعتاً حرف کوئی خوں میں مچل پڑتا ہے

    غم چھپائے نہیں چھپتا ہے کروں کیا عرفانؔ

    نام لوں اس کا تو آواز میں بل پڑتا ہے

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے